مارچ کے مہینے میں مہنگائی کی شرح بڑھ کر9.1 فیصد تک پہنچ گئی

اسلام آباد: پاکستان کے ادارہ شماریات (پی بی ایس) کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق مارچ کے مہینے میں صارفین کے استعمال کی اشیا کی قیمتوں میں اضافے کا ایک نیا دور دیکھنے میں آیا جہاں فروری کے 8.7 فیصد کے مقابلے میں مارچ میں افراط زر کی شرح 9.1 فیصد تک پہنچ گئی

ویب ڈیسک (ملتان ٹی وی ایچ ڈی 02 اپریل 2021)  رپورٹ کے مطابق ماہانہ بنیادوں پر مہنگائی میں 0.36 فیصد کا اضافہ ہوا جس کی بنیادی وجہ صارفین کے لیے کھانا پکانے کے تیل، چینی، گندم، دالیں، پٹرولیم مصنوعات اور بجلی کی قیمتوں میں اضافہ ہے۔

اسی دوران توانائی کی اعلٰی قیمتوں کی وجہ سے غیر خوراکی اشیا بھی گزشتہ چند مہینوں سے مستقل طور پر مہنگی ہورہی ہیں۔

نامناسب مقامی پیداوار کے ساتھ رواں مالی سال کے آغاز، جولائی میں افراط زر 9.3 فیصد پر تھا جو اگست میں کم ہوکر 8.2 فیصد رہ گیا تھا، پھر ستمبر میں 9 فیصد تک پہنچنے کے بعد اس میں کمی کا رجحان دیکھا گیا جس کی وجہ سے صارفین کو کچھ ریلیف ملا تھا تاہم فروری میں اس میں دوبارہ اضافے کا آغاز ہوا۔

چند صارفین کے استعمال کی اشیا کے ساتھ ساتھ توانائی کی قیمتوں نے مارچ میں مہنگائی کو ایک بار پھر بڑھا دیا اور اس کے نتیجے میں شہری اور دیہی علاقوں میں غذائی افراط زر دو ہندسوں میں داخل ہوگیا۔

چند اشیائے خوردونوش کی قیمتیں ایسی ہیں جن کی قیمتیں اب بھی عروج کی طرف گامزن ہیں، نو ماہ، جولائی سے مارچ کے درمیان اوسطاً کنزیومر پرائز انڈیکس (سی پی آئی) گزشتہ سال کے 11.53 فیصد کے مقابلے میں کم ہوکر رواں سال 8.34 فیصد ہوگیا ہے۔

کھانے پینے کی اعلی قیمتوں سے افراط زر میں اضافہ ہوا ہے کیونکہ شہری علاقوں میں مارچ میں ہر سال فوڈ گروپ کی قیمتوں میں 11.5 فیصد اور ماہ وار 1.7 فیصد اضافہ ہوا جبکہ دیہی علاقوں میں صورتحال تقریباً وہی رہی جہاں مارچ میں فوڈ گروپ کی قیمتیں 11.1 فیصد اور ماہ وار 1.5 فیصد تک بڑھ گئیں۔

ماہانہ بنیادوں پر اضافہ اشارہ کرتا ہے کہ آئندہ ماہ کھانے پینے کی اشیائے ضروریہ کی قیمتوں میں مزید اضافہ دیکھا جائے گا۔

اس کے علاوہ ہفتہ وار قیمتوں میں اضافے کا بھی رجحان دکھائی دے رہا ہے جو ماہانہ افراط زر کو مزید بڑھاتا ہے۔

حکومت نے گندم اور چینی کی کمی کو پورا کرنے اور مارکیٹ میں رسد میں بہتری لانے کے لیے درآمد کی ہے۔

مقامی مارکیٹ میں آلو اور پیاز کی آمد کے ساتھ گزشتہ ماہ کے دوران ان کی قیمتوں میں کمی ریکارڈ کی گئی۔

ہمارےیوٹیوب چینل کو سب سکرائب کرنا مت بھولیں

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *