کوئٹہ: مچھ واقعے پر ہزارہ برادری کا احتجاج جاری، وزیراعظم کا ’اچانک دورے‘ کا امکان

(ملتان ٹی وی ایچ ڈی 07 جنوری 2021)ملک بھر میں ہونے والی تنقید اور کابینہ کے مختلف سینئر اراکین کے مشورے پر وزیراعظم عمران خان نے اہل تشیع ہزارہ برادری کے اراکین سے اظہار یکجہتی کے لیے ’جلد‘ کوئٹہ کا دورہ کرنے کا فیصلہ کرلیا۔
وفاقی کابینہ کے ایک سینئر رکن کا کہنا تھا کہ ’سیکیورٹی وجوہات کے باعث وزیراعظم کے دورے کی تاریخ اور وقت کو خفیہ رکھا جارہا ہے. لیکن وہ (وزیراعظم) بہت جلد ایک سرپرائز دورہ کریں گے‘۔

11 کان کنوں کے سفاکانہ قتل کے بعد پیدا ہونے والی صورتحال کو دیکھنے والے ایک وزیر نے دعویٰ کیا.
کہ وزیر داخلہ شیخ رشید احمد سمیت کابینہ کے مختلف اراکین نے دوران اجلاس وزیراعظم کو مشورہ دیا تھا کہ انہیں سوگواروں کے سکون کے لیے کوئٹہ کا دورہ کرنا چاہیے۔‎
اپنے پیاروں کی تدفین کردیں، میں جلد آپ کے پاس آؤں گا، وزیراعظم کی ہزارہ برادری سے اپیل

جب ان سے پوچھا گیا کہ وزیراعظم نے اب تک کیوں کوئٹہ کا دورہ نہیں کیا تو ان کا کہنا تھا. اس کی وجہ .‘سیکیورٹی تحفظات‘ تھے. تاہم وزیر کا کہنا تھا کہ عمران خان کا خیال تھا
.کہ مظاہرین کے مطالبے پر ان کا دورہ ایک نئی مثال قائم کرسکتا ہے.

اور اگر کل کو ملک کے کسی حصے میں دہشت گرد حملہ ہوتا ہے. تو وہاں کے لوگ بھی اسی طرح کا مطالبہ کریں گے کہ ہم متاثرین کی تدفین سے قبل وزیراعظم کو دیکھنا چاہتے ہیں۔

یہی نہیں بلکہ گزشتہ روز وزیراعظم نے ایک ٹوئٹ میں ہزارہ خاندانوں کو مخاطب کرتے ہوئے. لکھا تھا کہ میں آپ کا درد بانٹتا ہوں اور غم کے ان لمحات میں اظہار یکجہتی. کے لیے پہلے بھی آپ کے پاس آچکا ہوں.

عمران خان نے کہا تھا کہ میں ہر خاندان سے ذاتی طور پر تعزیت اور دعا کے لیے بہت جلد دوبارہ آؤں گا، میں اپنے لوگوں کے اعتماد کو ٹھیس نہیں پہنچاؤں گا. ازراہ کرم اپنے پیاروں کی تدفین کردیں تاکہ ان کی روح کو سکون مل سکے۔
ہزارہ برادری کا احتجاج 5ویں روز بھی جاری
دوسری جانب کوئٹہ کے انتہائی سرد موسم اور درجہ حرارت نقطہ انجماد سے نیچے گرنے کے باوجود. خواتین اور بچوں سمیت لواحقین ہزارہ ٹاؤن کے قریب مغربی بائی پاس کے علاقے کو چھوڑنے کو تیار نہیں ہیں۔
مظاہرین کا یہ احتجاج پانچویں دن میں داخل ہوچکا ہے. اور گزشتہ روز اس احتجاج کے چوتھے دن وفاقی وزیر سمندری امور علی زیدی، معاون خصوصی برائے.
.
اوورسیز پاکستانیز زلفی بخاری اور وزیر اعلیٰ بلوچستان جام کمال خان نے مظاہرین سے مذاکرات کیے.
اور کوشش کی کہ وہ قتل کیے گئے. کان کنوں کی میتوں کی تدفین کردیں تاہم انہوں نے وزیراعظم سے ملاقات کے بغیر ایسا کرنے سے انکار کردیا۔
وفاقی کابینہ کے یہ 2 اراکین منگل کو اس وقت کوئٹہ پہنچے تھے. جب مظاہرین نے پیر کو کوئٹہ پہنچنے والے وزیر داخلہ شیخ رشید کی بات ماننے سے انکار کردیا تھا۔
اس سے قبل سوشل میڈیا پر وزیراعظم کے معاون خصوصی زلفی بخاری کی. ایک 90 سیکنڈ کی کلپ وائرل ہوئی جس پر انہیں سخت تنقید کا سامنا کرنا پڑا۔
اس ویڈیو میں انہیں مظاہرین سے یہ پوچھتے ہوئے دیکھا گیا کہ جب وزیراعظم آئیں گے. تو آپ ان سے کیا ذمہ داری لیں گے۔
مارا یوٹیوب چینل کو سب سکرائب کرنا مت بھولیں Multan TV HD

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *